Wednesday, 16 May 2018

ایجنڈا برائے سوشل میڈیا دوران رمضان

0 comments
ایجنڈا برائے سوشل میڈیا دوران رمضان


رمضان کریم کی آمد ہو چکی ہے۔ بازاروں میں رونق ہے۔ لوگ کھجوریں اور کپڑے خرید رہے ہیں۔ کسی بڑے شاپنگ مال میں کھڑے ہو کر "سیلفی" بھی لے رہے ہیں کہ روزے کی خریداری کرتے ہوئے۔ الحمداللہ۔
الحمداللہ کے بغیر جملہ ادھورا ہے۔ اس سے ایک نیکی کا "ٹچ" آجاتا ہے۔ مجھے یہ سب بہت اچھا لگ رہا ہے۔ میں بہت خوش ہوں۔ اس بار میں نے بھی سوچا ہے کہ صبح فجر کے وقت مسجد کے باہر سیلفی لوں گا۔ عنوان دوں گا۔ اپنے فرائض سے غافل نہیں ہوں میں۔ نہیں۔ یہ عنوان ٹھیک نہیں۔ یہ عنوان کیسا رہے گا۔ "اس کو کیا جانیں یہ دو رکعت کے امام"۔ واہ واہ۔ اقبال کی جے ہو۔ نہیں، یہ عنوان بھی ٹھیک نہیں۔ اس سے خود پرستی کی بو آتی ہے۔ تکبر اور میں۔ معاذاللہ۔ یہ خیال اگر میرے ذہن میں آگیا ہے تو کسی او رکے ذہن میں بھی آسکتا ہے۔ یہ عنوان نہیں رکھوں گا۔ اچھا کوئی اور سوچتا ہوں۔ پہلے دن سیلفی نہیں لینی۔ دوسرے تیسرے دن جب نمازیوں کی تعداد میں نمایاں کمی ہوگی۔ تب تصویر لوں گا۔ تاکہ پتا چلے اس منافق دنیا کو۔ ہم چند دن کے بیوپاری نہیں۔ پورا مہینہ ہی نماز چلائیں گے۔ ہاں عنوان آگیا ذہن میں۔ "ادھی لعنت دنیا تے، تے ادھی دنیا داراں ہو" واہ۔۔ دل اپنے اس عنوان پر جھوم اٹھا۔ یہ تو روحانیت اور تصوف کو بھی "ٹچ" کر رہا ہے۔ کیسا زبردست عنوان ہے۔ بس فائنل
اب باقی معاملات کی طرف بھی توجہ کروں۔ رمضان میں شاعری کیسی ہونی چاہیے۔ صرف مسلمان شعرا کی شاعری ہی ہونی چاہیے۔ ہاں یہ یہ یہ مسلک کا بھی نہ ہو۔ صرف صوفیانہ شاعری پر توجہ دوں تو؟ موضوعات اسلامی رہیں تو بہتر ہے۔ گوگل! اسلامی شاعری میں کیا کیا آتا ہے؟
حمد، نعت، منقبت، نوحے وغیرہ وغیرہ۔ نوحے تو محرم میں سنوں گا نا۔ یہ منقبت کیا ہوتی ہے۔ اس کو تلاش کرتا ہوں۔ نئی چیز ہوئی تو بلے بلے۔ اچھا تمہید کیسے باندھوں۔؟ ہاں!
ماہ مبارک کے مقدس دنوں میں آپ کے لیے ایک خوبصورت کلام لیکر حاضر ہوا ہوں۔ جس سے روح جھوم اٹھے گی۔ طبیعت شاداب ہوجائے گی۔ اور روزے کی ساری پیاس مٹ جائے گی۔ اللہ اللہ۔ واہ واہ۔۔۔ کیا ابتدائی سطر لکھی ہے۔ اس کے بعد تو کلام میں دم نہ بھی ہوا مارکیٹ میں "ہٹ" جائے گا۔ ہوہوہوہوہوہو
ہاں سب سے ضروری چیز۔ نماز کے اوقات میں سوشل میڈیا استعمال نہیں کرنا۔ مبادا کوئی سمجھے یہ نماز نہیں پڑھ رہا۔ ویسے میں کہہ دوں گا ہماری مسجد میں جلدی ہوجاتی ہے۔ تم ادھر کیا کر رہے ہو۔ ہاں جوابات تو سوچ کر رکھنے چاہیے نا۔ اچھا۔ اور سوچو! کیا کیا بات ہو سکتی ہے۔ نہیں ابھی میرے ذہن میں کچھ نہیں آرہا۔ اچھا فی البدیہہ دیکھیں گے۔تراویح کی تو خیر ہے۔ شکر ہے اس وقت میں اپنی ملازمت پر ہوتا ہوں۔ ورنہ تو ایک یا دو کیفیت ناموں خاطر۔۔۔ لاحول ولا قوۃ الا باللہ۔ اللہ سب کو ریاکاری سے محفوظ رکھے۔


اچھا قرآن پڑھتے ہوئے بھی ایک تصویر ہونی چاہیے۔ پر خود تو ایسی نمود سے نفرت ہے۔ خاندان کے کسی فرد کو ایسے بین السطور ترغیب دوں گا۔ ہو سکتا ہے وہ خود ہی ایسی کوئی تصویر کھینچ لیں۔ امی ابو ساتھ بھی ایک تصویر تو ہونی چاہیے۔ افطاری کی تصویر نہیں لگاؤں گا۔ اس سے نمائش کی بو آتی ہے۔ کیا بندہ شوہدوں کی طرح سب کو بتائے کیا کیا کھایا ہے۔ یہ بھی کوئی کہنے کی بات ہوتی ہے۔ ویسے کبھی باتوں میں یا تبصروں میں بات ہوجائےتو الگ بات ہے۔ لیکن ایک بات تو طے ہے کہ کسی بھی خریداری پر جا کر میں وہاں کی تصاویر نہیں لگاؤں گا۔ ورنہ باقیوں اور مجھ میں فرق کیا رہے گا۔
اللہ ہم سب کو اس رمضان نیک کام کرنے اور دوسروں کو ان کی ترغیب دینے کی توفیق دے۔ آمین


خود کلامی از نیرنگ خیال
16 مئی 2018

Wednesday, 7 March 2018

وزیراعظم (ایک آنکھوں دیکھا کانوں سنا مکالمہ)

0 comments
وزیراعظم
(ایک آنکھوں دیکھا کانوں سنا مکالمہ(
آج ایک بیگ خریدنے کی نیت سے ٹاؤن شپ بازار جانا ہوا۔ مختلف دکانوں سے ہوتا ہوا ایک دکان میں داخل ہوا۔ دکان میں پہلے سے ایک خاتون دو لڑکیوں سمیت موجود تھی۔ میں خاموشی سے دکاندار کے فارغ ہونے کا انتظار کرنے لگا۔ دکاندار ان خواتین سے بحث میں مصروف تھا۔ جو گفتگو  میں نے سنی ،  پیش خدمت ہے۔
لڑکی: یہ بیگ کتنے کا ہے؟
دکاندار: یہ سات سو کا ہے۔
خاتون: سات سو؟ زیادہ سے زیادہ دو ڈھائی سو کا بیگ لگتا ہے۔ 
دکاندار: نہیں ! یہ بیگ سات سو کا ہی ہے۔
لڑکی: یہ بیگ ہمیں تین سو میں دے دو۔
دکاندار: نہیں بی بی! یہ سات سے کم نہیں ہوگا۔ 
دوسری لڑکی: ہم نے پہلے بھی تمہاری دکان سے ایک بیگ ڈھائی سو کا لیا تھا۔ وہ سارا خراب ہوگیا۔ 
دکاندار: کب لیا تھا؟
لڑکی: گزشتہ سال
دکاندار: اوہ بی بی! گزشتہ سال کا تو وزیراعظم اس سال تک نہیں چلا۔ تم بیگ چلانے کی بات کرتی ہو۔ 

نیرنگ خیال
7 مارچ 2018


Monday, 19 February 2018

حل

2 comments
حل
پس منظر:
چند سال قبل فارغ التحصیل طلبا کے لیے حکومت کی طرف سے مختلف شعبہ ہائے جات میں مبتدی کے طور پر بھرتی کیے جانے کی پالیسی منظر عام پر آئی تھی۔ اس میں طلبا کو ماہانہ مشاہرہ دیا جاتا اور وہ پہلے سے کام کر رہے اداروں میں اپنے متعلقہ شعبے میں ایک سال کے لیے بطور مبتدی بھرتی کیے جاتے۔ جہاں ان کو عملی طور پر رہنمائی میسر ہوتی تھی۔ گزشتہ چند سال سے یہ محسوس کیا جا رہا تھا کہ اس پالیسی میں مالی بدعنوانی بہت زیادہ ہو گئی ہے۔ مستحق طلبا کی بجائے چند مفت خورے بھی اس میں شامل ہوجاتے۔ مزید یہ بھی سننے میں آیا کہ بڑی تعداد میں "جعلی مبتدیوں" کا اندراج کیا جاتا اور یوں ایک خطیر رقم بالا بالا ہی عالم بالا کو سدھار جاتی۔ اس مالی بدعنوانی کو روکنے کے لیے قوم کے خادم نے فوری اجلاس طلب کر لیا۔


منظر:
پالیسی بنانے والے قوم کے خادم کے سامنے سر جھکائے بیٹھے ہیں۔ چند سال قبل فارغ التحصیل طلبا کے لیے مختلف شعبہ ہائے جات میں مبتدی بھرتی کرنے اور ان کو عملی ماحول سے روشناس کروانے کے لیے جو پالیسی وضع کی گئی تھی۔ اس کے متعلق بات کی جانے والی تھی۔


مکالمہ:
خادم: میرا یہ خیال ہے، بلکہ میں ایسا سمجھتا ہوں کہ ہمیں اس منصوبے کو فوراً! سے پیشتر داخل دفتر کر دینا چاہیے۔ اور اس منصوبے کو لمحہ ضائع کیے بغیر بند کر دینا چاہیے۔ غضب دیکھو! ملک و قوم کے معماروں کی بھلائی کے لیے جو منصوبہ شروع کیا تھا۔ اس میں ہی مالی بدعنوانی کی خبریں ہیں۔
ایک رکن: سر! جان کی امان پاؤں تو کچھ عرض کروں۔ اس منصوبے سے بہت سے مستحق طلبا کو بھی فائدہ پہنچ رہا ہے۔
خادم: بالکل پہنچ رہا ہے اور یہی تو اس منصوبے کی روح تھی۔ اپنی انگلی "جالبانہ" انداز میں لہراتے ہوئے۔ مگر ان مالی بدعنوانیوں کا کیا کیا جائے۔ آگے کم مسائل ہیں جو ایک نیا محاذ بھی کھول لیا جائے۔
ایک اور رکن: سر! لیکن یہ تو مسئلے کا حل نہیں۔ ہمیں ان عناصر کی سرکوبی کرنی چاہیے نہ کہ اس منصوبے کو "پنج سالہ منصوبے" میں شامل کرنا چاہیے۔
خادم: قہقہہ لگاتے ہوئے۔ لئو دسو یار! اب ہم چٹھہ صاحب کو کہیں کہ مالی بدعنوانیاں مت کریں۔ یا پھر اپنے بٹ صاحب کو اس کام سے منع کریں۔یار شرم آتی ہے یاروں سے ایسی باتیں کرتے۔ چھوڑو یار، پروگرام ہی بند کرو۔ نہ ہوگا بانس نہ بجے گی بانسری۔
اراکین مجلس بیک زباں ہو کر: واہ واہ۔ کیا دور اندیشی ہے۔
پیچھے پس منظر میں ہلکی سی دھن پر گیت چل رہا ہے۔
تو خدا کا نور ہے
عقل ہے شعور ہے
قوم تیرے ساتھ ہے
تیرے ہی وجود سے
ملک کی نجات ہے
توہےمہرِ صبح نو
تیرے بعد رات ہے



از قلم نیرنگ خیال
19 فروری 2018


Monday, 15 January 2018

تتلیاں

0 comments

ہمارے گھر کے باہر کافی کثیر تعداد میں درخت اور پودے موجود تھے۔ انہی پودوں اور پھولوں پر رنگ برنگی تتلیاں منڈلایا کرتی تھیں، اور ہم انہیں پکڑا کرتے تھے۔ کبھی تتلی پکڑ کر چھوڑ دیتے۔ اور کبھی وہ ہماری گرفت کی تاب نہ لا کر چل بستی۔ گو کہ ہم بہت احتیاط سے کام لیتے تھے مگر اجل پر کس کا زور ہے۔ تتلیوں کے رنگ ہمارے انگوٹھے اور شہادت کی انگلی پر رہ جایا کرتے تھے۔ اور وہی ہماری ٹرافی ہوا کرتی تھی۔ بدقسمتی سے لاہور شہر میں تتلیاں بہت کم نظر آتی ہیں۔ بلکہ شاید دھواں، آلودہ فضا اور کٹتے درختوں نے یوں بھی پرندوں اور ایسی خوبصورت مخلوق کو شہر سے باہر دھکیل دیا ہے۔ اسی سلسلے میں جلو بوٹینیکل گارڈن جانے کا پروگرام بنایا کہ کچھ تتلیاں اور کچھ پودے اکھٹے ایک جگہ دیکھ لیے جائیں۔

شدید حبس کا موسم تھا۔ آسمان بادلوں نے گھیر رکھا تھا مگر بارش کے قطروں کی پہلے آپ پہلے آپ کی بحث ابھی جاری تھی۔ درخت یوں ساکن تھے گویا بت ہوں۔ کبھی کسی درخت پر پرندوں کے بیٹھنے اور اڑنے سے کچھ پتے ہل جاتے، تو باقی پتے ان کو یوں حیرت سے تکتے محسوس ہوتے جیسے کسی ایک بچے کی شرارت پر باقی بچے اس کو دیکھتے ہیں، گویا کہہ رہے ہوں، اب تمہاری وجہ سے سب کو ڈانٹ پڑ سکتی ہے۔ اکا دکا منڈلاتی تتلیاں نظر آئیں تو کیا کیا زمانے یاد آئے۔ میں راہ میں چلتے ہوئے  دوسرے اور اپنے بچوں کو دیکھنے لگا۔جن کے لیے پھولوں پر تتلیوں کے بیٹھنے کے منظر میں کوئی دلچسپی و دلکشی نہ تھی۔ وہ بالکل بڑوں کی طرح وہاں سے گزرتے جاتے تھے۔ بغیر متوجہ ہوئے۔میں چاہتا تھا میرے بچے تتلیوں کے پیچھے بھاگیں۔ مگر یہ خواہش میرے گلے میں کہیں گھٹ گئی تھی۔ کتنی سنجیدگی بھرتی جاتی ہے۔ جاذبیت اب بےنام رنگوں اور جعلی مناظر تک محدود ہوگئی ہے۔

یوں ہی چھوٹے چھوٹے باغیچوں سے گزرتے گزرتے ایک چھوٹے سے بچے نے میری توجہ کھینچ لی۔ وہ ایک شوخ رنگ کی تتلی کے پیچھے بھاگ رہا تھا۔ایک بوڑھے بزرگ جو انداز سے اس کے دادا معلوم ہوتے تھے اس کے پیچھے آہستہ آہستہ چل رہے تھے۔ وہ بچہ گردوپیش سے بےخبر اس تتلی کو پکڑنے میں مصروف تھا۔ تتلی کبھی ایک پودے پر بیٹھتی کبھی دوسرے پر۔ بچہ اس کے پیچھے گھات لگائے جاتا مگر قریب پہنچنے پر وہ اڑ جاتی۔ بچے کے دادا بچے کے کھیل سے شاید اکتاہٹ محسوس کرنے لگے تھے۔ آخر انہوں نے بچے کو مخاطب کرتے ہوئے کہا۔ “آؤ چلیں! اس بیکار کام سے کچھ حاصل نہیں۔ تم اگر اس کو پکڑ بھی لو گے تو ہاتھ پر ایک کچے رنگ کے سوا کچھ نہ رہے گا۔” بچہ مایوس سا ہو کر بزرگ کے پاس آگیا۔ اس کے معصوم منظر پر بزرگ کی اس بات نے سیاہ رنگ کر دیا ہوگا۔

ہم جب بوٹینیکل گارڈن سے باہر نکلنے لگے تو بارش چھما چھم برسنے لگی تھی۔ ٹھنڈی ہوا کے جھونکوں نے دل و دماغ کو ایک تازگی دے دی تھی۔ پودے اور درخت دھل رہے تھے۔ پتے بارش اور ہوا کا لمس پا کر دائیں بائیں شرارت سے جھوم رہے تھے۔ شاید برستی بارش نے ان پر مستی کی کیفیت طاری کر دی تھی۔ اور میں ان برستے قطروں میں سے وہ پہلا قطرہ ڈھونڈنا چاہ رہا تھا جو “پہلے آپ ” کی بحث سے اکتا کر نیچے کو چل پڑا تھا۔

آج نئے سال کے پہلے دن مجھے وہ بچہ یاد آرہا ہے جو رنگین تتلیوں کے پیچھے بھاگتا پھرتا تھا۔ ان کا لمس پا کر خوش ہوتا اور ان کے کچے رنگ کو اپنی پوروں پر دیکھتے پہروں نہیں تھکتا تھا۔ مگر پھر عمرِ رواں نے اس منظر میں مزید منہمک نہ رہنے دیا۔ نئی عمر کی تتلیاں، نئے رنگوں کے ساتھ آموجود ہوئیں۔ ان کا لمس، ان کے رنگ، بچپن کی تتلیوں سے کہیں زیادہ دلفریب لگتے تھے۔ ڈھلتی عمر اور بالوں میں بڑھتی چاندی لیے، میں اسی سوچ میں ڈوبا ہوا ہوں کہ ایک سال گزر گیا۔ کچھ رنگ پوروں پر جمے ہیں۔ کچھ ادھ موئی خواہشات طاقچوں میں دھری ہیں۔ کچھ تتلیاں دور کتنے خوبصورت باغ میں پھر رہی ہیں۔ خواہش ہے کہ آگے بڑھ کر ان کو چھو لوں۔ ان کو پکڑ لوں۔ ہر عمر، ہر دور کی اپنی تتلیاں ہیں۔ ان کے اپنے منظر ہیں، اور اپنی کشش ہے۔ مگر ان سارے مناظر میں، ان ساری تتلیوں میں سب سے خوبصورت اور دلفریب بچپن کی تتلیاں ہیں۔گزرتی عمر کے ساتھ ساتھ انسان جن تتلیوں کے پیچھے بھاگتا ہے وہ حاصل ہونے پر کریہہ الصورت اور بدنما محسوس ہوتی ہیں۔ ان کے رنگ پیشانی پر لکیروں کی صورت چمکنے لگتے ہیں۔ ہر کوئی حقیقت سے باخبر ہونے کے باوجود اپنے اپنے منظر میں اپنی تتلیوں کو چھو لینے کی آس لیے ان کے پیچھے بھاگتا پھرتا ہے اور خود اس کے پاس ہر دوسرے شخص کے مناظر اور خواہشوں کے لیے ایک ہی فقرہ ہے۔ اسی بوڑھے کا فقرہ۔

Monday, 25 December 2017

کیا ڈیڑھ چلو پانی میں ایمان بہہ گیا

2 comments
کیا ڈیڑھ چلو پانی میں ایمان بہہ گیا


دور جدید کا ایک بڑا خسارہ برداشت کا جنازہ ہے۔ چند اہل علم و ہنر اس بات کو تسلیم کرنے سے انکاری ہیں اور ان کا خیال ہے کہ مروت، محبت اور رواداری قریب المرگ ضرور ہیں مگر ابھی جنازہ نہیں اٹھا۔ بعض کے ہاں یہ خیال پایا جاتا ہے کہ سکرات طاری ہے مگر ممکن ہےکہ پھر سے صحت پائیں۔ میں ان پرامید لوگوں کی شمع امید گل کرنا نہیں چاہتا مگر ان سے یہ سوال ضرور پوچھ لیتا ہوں کہ قریب المرگ ہے تو کب تک سرہانے سے لگے اس کو دیکھو گے؟سکرات طاری ہے تو وینٹیلیٹرز کب تک کام کریں گے؟
موجودہ معاشرے میں جہاں ایک "فارورڈ" کے بٹن نے تحقیق کا گریباں چاک کیا ہے وہیں "کاپی پیسٹ" جیسی سہولت تعمیری اور مدلل گفتگو کے لیے پھانسی کا پھندا ثابت ہوئی ہے۔ آپ اپنا نکتہ نظر سمجھائیں۔ مخالف آپ کو پلوٹو ، سقراط یا پھر کسی اور ایسے ہی بڑے دانش ور کا قول ا س زور سے مارے گا کہ آپ کو دن میں تارے نظر آجائیں گے۔ آپ کہیں گے کہ میاں اس بات کے سیاق و سباق کچھ اور ہیں۔ تو وہ جواب میں کسی اور دانش ور کا کوئی اور اقتباس لا مارے گا۔ اب آپ اس سے کہیں گے کہ بھئی تمہاری رائے کیا ہے؟ تو وہ آپ کو جواب دے گا کہ "جب تم اتنے بڑے لوگوں کی بات سمجھنے سے قاصر ہو تو میری رائے کہاں سمجھو گے؟" یا حیرت! یعنی موصوف کی رائے ان دانش وروں سے بھی بڑی ہے؟ بزعم خود ذہین اور عالم ہونے کی جو غلط فہمی تیز رفتاری سے پرورش پارہی ہے وہ موجودہ صورتحال میں بڑی زہریلی اور مہلک ہے۔
پچیس دسمبر کو قائد کی سالگرہ مبارک کے پیغامات کے ساتھ ساتھ کفر کے کتنے فتوے بھی ہواؤں میں داغ دیے جاتے ہیں۔ سو ہمیشہ کی طرح آج بھی چند پیغامات رقصاں تھے کہ " میری کرسمس کا مطلب ہے۔ اللہ نے بیٹا جنا (نعوذ باللہ)۔ اور ایسا عقیدہ رکھنا کفر ہے۔ اور آگے ایک طویل اصلاحی مکالمہ" میں اس آدھے سچ اور آدھے جھوٹ میں سچ والے حصے سے متفق ہوں۔ کہ ایسا عقیدہ رکھنا کفر ہے، اور ترجمے سے اختلاف رکھتا ہوں۔ میں مانتا ہوں کہ ایسا عقیدہ رکھنا کفر ہے اور میرا ذاتی خیال ہے کہ تمام اہل اسلام عیسائیوں کو مسلمان سمجھتے بھی نہیں ہیں۔ تو پھر جھگڑا کیا ہے؟ ڈیڑھ چلو پانی میں آپ کا ایمان نہیں بہتا۔ جھوٹ بولنے سے آپ کو حیا نہیں آتی۔ ملاوٹ کرنے سے بھی ایمان میں خلل واقع نہیں ہوتا۔ کلمہ پڑھ کر دو نمبر چیزیں فروخت کرنے میں رتی برابر شرم محسوس نہیں ہوتی۔ اور تو اور من گھڑت باتیں قرون اولیٰ کے لوگوں سے منسوب کر کے پھیلاتے وقت بھی آپ کا دل نہیں کانپتا۔ تو پھر یہ بات میری سمجھ سے بالاتر ہے کہ کسی بھی مذہب کے پیروکاروں کو ان کے عقائد کے مطابق ان کے تہوار کی مبارک دے دینا آپ کو خارج از اسلام کیسے کر دیتا ہے؟ ماسوائے یہ کہ آپ اس عقیدے کے باقاعدہ پیروکار ہوجائیں۔میں نے جب میسج بھیجنے والے سے استفسار کیا تو انہوں نے جواب میں ایک اور تصویر شکل کا اقتباس میرے منہ پر دے مارا۔ جو شاید کسی پرائمری پاس (اس حسنِ گماں پر معذرت) ماجھے گامے کا ڈیزائن کیا ہوا تھا۔میں نے عرض کی اگر تکفیری فتوی جات کی ہی بات ہو تو اہل اسلام میں کوئی مسلم نہ بچے۔ اس پر انہوں نے مجھ سے شدید بیزاری کا اظہار کیا۔
خدا را اپنے ذہنوں کو زحمت دیجیے۔ اس کا کچھ نہ کچھ حصہ دنیا میں استعمال کر لیجیے۔ اور اگر نیا غیر استعمال شدہ "ڈبا پیک" دماغ روز محشر میں لے جانے پر کوئی انعام و اکرام مقرر ہے تو ہمیں بھی بتائیے۔ اور اگر ایسا کوئی انعام مقرر نہیں تو اپنے اندر بھرتی نفرتوں کو ملک عدم کی راہ دکھائیے۔ معاشرتی اور سماجی سطح پر اس برداشت، رواداری اور مروت کا عملی مظاہرہ کیجیے جس کا اسلام آپ سے تقاضا کرتا ہے۔غور و فکر کرنے کی عادت ڈالیے۔ نہ کہ یاوہ گوئی اور خرافات بکنے تک محدود ہوجائیے۔ ورنہ یقین کیجیے کہ وہ دن دور نہیں جب اپنے لکھے کے نیچے لوگ "بقلم خود" کی جگہ "بگالم خود" لکھا کریں گے اور اس پر فخر محسوس کریں گے۔


از قلم نیرنگ خیال
25 دسمبر 2017

Thursday, 21 December 2017

ایک شعر کی فکاہیہ تشریح

2 comments
شال پہنائے گا اب کون دسمبر میں تمہیں
بارشوں میں کبھی بھیگو گے تو یاد آؤں گا
فکاہیہ تشریح:
ہم اس حقیقت سے آنکھیں نہیں چرا سکتے کہ محبت کی داستان میں رنگ بھرنے کو مبالغہ آرائی اور لفاظی عام ہے۔ مگر مبالغہ آرائی اور لفاظی کو بھی کوئی بنیاد تو میسر ہو۔ شاعر اپنی اہمیت جتانے کے چکر میں زمینی حقائق بالکل ہی فراموش کر بیٹھا ہے۔ ایسی صورتحال تب ہوتی ہے جب آپ تیز تیز دلائل دینے کی کوشش میں مصروف ہوں اور پھر آپ کا تمام زور منطقی دلائل کی بجائے محض زور بیاں پر رہ جائے۔ ہم نے ساری عمر یہی دیکھا ہے کہ شال اوڑھائی جاتی ہے، پہنائی نہیں جاتی۔ اس پر ستم بالائے ستم یہ کہ وہ بھی بارش میں۔ یعنی صریح ظلم۔ ایک طرف تو محبوب کی نازکی کو یکسر نظرانداز کر دیا گیا ہے، دوسری طرف جب گرم وزنی شال پر بارش کا پانی پڑے گاتو اس کا وزن دس گنا بڑھ جائے گا۔ اور پھر بھیگنے کے بعد گیلی شال میں جو دسمبر کی ٹھنڈ مزا کروائے گی تو ایک بار محبوب بھی پکار اٹھے گا۔ "چس کرا دتی اے۔" درحقیقت شاعر نے اپنی لفاظی سے سرد موسم میں گیلی شال اوڑھانے کی منظر کشی میں محبوب کو جو ٹوپی پہنائی ہے وہ صحیح معنوں میں داد کی مستحق ہے۔ویسے ابھی مزاحیہ شرح لکھتے لکھتے مجھے راجندر ناتھ کا بڑا خوبصورت شعر یاد آیا ہے کہ

اک دن برسات میں بھیگے تھے ہم تم دونوں
اب کبھی برسات میں بھیگو گے تو یاد آؤں گا

شیلف میں رکھی ہوئی اپنی کتابوں میں سے
کوئی دیوان اٹھاؤ گے تو یاد آؤں گا
از قلم نیرنگ خیال
21 دسمبر 2017

Wednesday, 20 December 2017

لو آج کی شب بھی سو چکے ہم

0 comments

شہر اقتدار سے دانہ پانی اٹھنے کے بعد ہم نے زندہ دلوں کے شہر کا رخ کیا۔ جس دوست کو بھی یہ خبر سنائی، اس نے قہقہہ لگا کر ایک ہی بات کی۔ “جتھے دی کھوتی اوتھے آن کھلوتی”۔ ان دنوں دو باتوں پر ہماری زبان سے ہر وقت شکر ادا ہوتا تھا۔ ایک کہ یہ محاورہ مذکر نہیں۔ دوسرا اہلِ زبان اس میں مذکر کے لیے کچھ مناسب ترامیم کا ارادہ نہیں رکھتے۔ نئی ملازمت میں آتے ہی پتا چلا کہ شام کو آنا ہے۔ اور صبح سویرے منہ اندھیرے جانا ہے۔ چند دن گزارے تھے کہ منہ تو یوں بھی اندھیرے کا ہی حصہ بن گیا۔ لیکن بات اس منہ اندھیرے کی نہیں بلکہ بات ہے ہماری دکھتی رگ کی۔ یعنی کہ لیپ ٹاپ۔

یہاں پر ہمیں ایک بالکل نیا لیپ ٹاپ دیا گیا تھا۔لیکن بستہ پرانا تھا۔ یہ بڑی دلچسپ بات تھی۔ ہم دل پر لے گئے۔ کہا کہ بستہ بھی نیا دو۔ متعلقہ شعبے کا فرد متعلقہ شعبوں کے افراد کی طرح ہی ہنسنے لگا۔ ہم اس ہنسی سے خوب آشنا تھے۔ خیر یہ تو خود بہلا رہے تھے وگرنہ اصل بات یہ ہے کہ طبیعت بڑی مکدر ہوئی۔ ایک تو ہمیں اس عزت افزائی کی عادت نہ تھی۔ دوسرا اس کے کلیدی تختہ کی اکائیاں بہت نرم تھیں۔ اور ہماری سخت جاں انگلیاں ان کی نرمی کو کسی حسینہ کے لمس جیسا محسوس کرتی تھیں۔ اس کے دوبنیادی نقصانات تھے۔ ایک تو دوران کام ہمارا دھیان حسیناؤں میں الجھا رہتا۔ دوسرا ہم بلاوجہ اکائیاں دباتے رہتے۔ تاہم ہمارا لیپ ٹاپ مکمل طور پر مردانہ تھا۔ گلا پھاڑ کر چیخنا ہو تو حاضر۔ مگر جو سرگوشی کا کہو تو آنسو بہاتا تھا۔ متعلقہ شعبہ سے رابطہ پر معلوم ہوا کہ اس ماڈل میں نقص ہے۔ اور ہیڈ فون استعمال نہیں کرسکتے۔طمانیت کی ایک لہر پورے وجود میں دوڑ گئی۔ زندگی میں اگر ہم کو ایسا لیپ ٹاپ دے دیا جائے جس میں کوئی نقص نہ ہو تو شاید ہم کام ہی نہ کرپائیں۔ لیکن یہ بات سب کو بتانے کی تھوڑی تھی۔ سو ہم نے کلہاڑے پر پاؤں مارتے ہوئے کہا کہ میاں! کچھ اندازہ بھی ہے ہیڈ فون ہمارے کام کے لیے کتنا ضروری ہے۔ فون کس سے سنیں گے۔ کیا محلے والوں کو بتلائیں گاہک ہم سے جس زباں میں بات کرتا ہے۔ اس کے لیے تو شاعر مدتوں قبل شرح آرزو سے منع فرما گیا ہے۔ اب کیا کریں۔ پرانی کمپنی بہت یاد آئی۔ جہاں ہم چیزوں کے چلنے پر شکرادا کیا کرتے تھے۔ کہاں یہ کہ ہم چیزوں کے نہ چلنے پر نالاں ہیں۔ فلک کو بھی ہم سے کیا کیا دشمنیاں نکالنی تھیں۔

چند دن گزرے تھے کہ ایک نوجوان معصوم شکل ہمارے پاس آیا اور کہا کہ آپ کا لیپ ٹاپ بدلنا چاہتا ہوں۔ سو ڈیٹا کے بارے میں حکم کیجیے کہ کس طرح نئے والے میں منتقل فرماویں گے۔ اب اللہ جانتا ہے کہ معصوم شکل اس کی قدرتی تھی یا اس نے یہ ریاضت سے حاصل کی تھی۔ بہرحال ہم نے اس کی باتوں میں آکر لیپ ٹاپ اس کے حوالے کر دیا۔ جس کو وہ ایک اور نئے لیکن نسبتاً پرانے لیپ ٹاپ سے بدل لایا۔ اس لیپ ٹاپ کے ماتھے پر ابھرا گومڑ دیکھ کر دل کو یک گونہ تسلی ہوئی۔ سب سے پہلے ہیڈ فون لگایا۔ سرگوشیاں اچھی کرتا تھا۔ پنک فلائیڈ اورڈسٹی سپرنگ فیلڈ اسے زبانی یاد تھے۔ حق حق۔ دعا کے لیے ہاتھ اٹھا دیے۔ میاں! کیا چیز لائے ہو۔ اللہ تمہیں اس کا اجر دے گا۔

چند دن ہی گزرے تھے کہ اس نئے مگر پرانے لیپ ٹاپ نے اپنے رنگ ڈھنگ دکھانے شروع کیے۔ جب تک ہم اس سے نہ ملے تھے سمجھتے تھے کہ اٹھنے میں ہم سے زیادہ سست کوئی نہیں۔ کبھی پہلو بدلا، کبھی لیٹ رہے، آدھے بیٹھ گئے، دوبارہ لیٹ گئے۔ یوں اٹھنے کے بعد بستر سے نیچے پاؤں اتارتے اتارتے ہم کو بیس سے تیس منٹ لگتے ہیں۔ لیکن موصوف سے ملاقات پر اندازہ ہوا کہ ہم تو برق رفتار ہیں۔ہماری اڑان پر تو آہو بھی آہیں بھرتا ہوگا۔ پاور آف کرنے کا باقاعدہ برا مناتا تھا۔ شاید یہ بتانا چاہتا تھا کہ بھئی! ہم کوئی انسان تھوڑی ہیں جن کو آرام کی ضرورت ہو۔ ہم تو مشین ہیں۔ سو چلاؤ چلاؤ۔۔۔ یا پھر چلّاؤ۔ ہمارے حصے میں آخرالذکر ہی آیا۔

پاور آن کرنے پر تو موصوف کے نخرے کسی حسینہ سے کم نہ تھے۔ سیٹ اپ میں داخل ہونے والی سکرین جو ہم مدتوں سے بھول چکے تھے اسی نامعقول نے یاد کروائی۔ پھر جو بوٹ سکرین پر آتا تو دل کرتا کہ بوٹ اسے ہی دے ماریں۔ اس کے بعد یکدم سکرین غائب ہوجاتی۔سکرین پر تاریکی چھاجاتی۔ ہم بے چین ہو کر بار بار پہلو بدلنے لگتے۔ ہارڈ ڈسک کی جلتی بجھتی بتی ہمیں یقین دلاتی کہ پس پردہ کچھ کہانی چل رہی ہے۔ ایسے موقعوں پر ابھی ہم اتاؤلے ہو کر سوچ ہی رہے ہوتے کہ اب اس کو ایک بار پاور آف کر کے دوبارہ چلا لیں کہ یکدم جھماکے سے ایک نیلی سکرین آجاتی۔ نیلے رنگ سے ہماری محبت شاید اسی وجہ سے ہے۔ اس سکرین کو دیکھ کر ہم خدا کر شکر کرتے اور چائے بنانے کا رخ کرتے۔ چائے بنا کر واپس آتے آتے لاگ ان سکرین آچکی ہوتی تھی۔ اب ہمیں معلوم نہیں کہ یہ کب آیا کرتی تھی۔ کیوں کہ چائے بنانے کا عمل بھی طویل ہی ہوتا ہے۔ بہرحال لاگ ان کر چکنے کے بعد ہم آرام سے چائے نوش فرماتے۔ کبھی کبھار آخری چسکی سے پہلے یا اکثر آخری چسکی کے ساتھ ہی ڈیسک ٹاپ کام کے لئے تیار ہوا کرتا تھا۔

مدتوں ہم اقبال کے اس بیان کو بغیر سمجھے پیش کرتے رہے کہ “ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں۔” لیکن اس مصرعہ میں غوطہ زن ہونے کا سبب یہ شمارندی آغوشیہ ہی بنا۔ جب موصوف ایک بار کام کرنے کے لئے تیار ہوجاتے تو اس کے بعد اطلاقیے (ایپلیکشنز) چلانے کا مشکل مرحلہ درپیش آتا۔ اس مثال کو سمجھنے کے لیے آپ کا شادی شدہ ہونا بےحد ضروری ہے۔فرض کیجیے کہ کسی دن یوں ہی بےوقت آپ نے اپنی بیگم سے چائے کی فرمائش داغ دی۔ اور اس نے کہا۔ لیجیے۔ ابھی بنائے دیتی ہوں۔ تو بھئی۔ آپ بھی جانتے ہیں کہ جب تک وہ چائے تیار ہو کر آپ کے سامنے آتی ہے۔ حقیقت میں چائے کا وقت ہوچکا ہوتا ہے۔ ہمارے اس شمارندی آغوشیے نے بھی ایسا ہی مزاج پایا تھا۔ ای میل اطلاقیہ اگر آپ نے بعد میں کھولا ہے اور پہلے کوئی اور اطلاقیہ چلانے کی جرأت کی ہے۔ تو بھی یہ مشین اپنے تیار کردہ سکرپٹ کے مطابق پہلے ای میل کا اطلاقیہ ہی چلائے گی۔ آپ کا دوسرا اطلاقیہ انتظار کرے۔ ایسے موقعوں پر ہم یہ کہہ کر دل کو سمجھا لیتے ہیں کہ اصول بھی تو یہی ہے۔قدرت خدا کی دیکھیے کہ ایک بعد دوسرا اور دوسرے کے بعد تیسرا اطلاقیہ چلاتے جب کام کا ماحول بنتا تو ایک بار پھر ہماری چائے کا وقت ہوجاتا۔

چند دن گزرے تھے کہ ہماری کام چور طبیعت بھی خود سے بیزار نظر آنے لگی۔ کہاں ہم اپنے تئیں خود کو پیر آلکسی سمجھتے کہاں ایک مشین کے سامنے ہماری کاہلی بےبس نظر آنے لگی۔ دنیا کے ساتھ ساتھ اس کی ایجادات سے بھی اعتبار اٹھتا نظر آنے لگا۔ اپنے افسران کے سامنے عرض گزاری۔ حضور! آپ کی مردم شناسی کا جواب نہیں۔ واللہ آج سے قبل کوئی ہمارے مزاج کو اس طرح نہ سمجھ پایا تھا۔ لیکن اب صورتحال یہ ہے کہ “اور سے اور ہوئے سستی کے عنواں جاناں”۔ ہماری بات کو سمجھیے۔ ہمیں ایک بالائے لب تبسم سے مت ٹرخائیے۔ للہ کچھ کیجیے وگرنہ آنے والے شب و روز ہمارے لیے اس موضوع میں تحقیق کے وہ در وا کر جائیں گے کہ کروٹ لینے کو بھی فرصت نصیب نہ ہوگی۔انہوں نے مسکرا کر ٹالنا چاہا، مگر ہم نہ ٹلے۔آخر انہوں نے متعلقہ شعبہ کے نام رقعہ لکھ دیا۔ اب ہم نئے لیپ ٹاپ کی آس لئے متعلقہ شعبے کے چکر لگاتے رہتے۔ رفتہ رفتہ صورتحال بہ الفاظ پطرس یہ ہوئی جاتی تھی کہ ہم لیپ ٹاپ کا پتا کرنے متعلقہ شعبہ تک جاتے اور وہاں موجود افسران ہمیں ایک شفیق مسکراہٹ کے ساتھ چلے جانے کا اشارہ کرتے۔کبھی ہم دروازے کے باہر سے ہی اشارہ کر کے پوچھتے اور نفی میں جواب پا کر چلے آتے۔صورتحال جب اس نہج پر پہنچی کہ کبھی دروازے کے باہر سے گزرتے نادانستہ نگاہ بھی اندر پڑ جاتی تو ایک سر نفی میں ہلتا نظر آتا، ہم نے پوچھنا چھوڑ دیا۔ آخر چند مہینوں بعد وہی معصوم صورت نوجوان وہی مخصوص مسکراہٹ سجائے ہاتھ میں ایک بڑی بھاری سی پتھر نما چیز اٹھائے ہماری میز پر آن پہنچا۔
ہم نے استفہامیہ انداز میں اس کی طرف دیکھا۔
لیپ ٹاپ۔ اس نے مسکراتے ہوئے کہا۔
کچھ نہیں لکھیں گے اب ہم۔ اس موضوع پر دوبارہ قلم کشائی نہیں کریں گے۔ کبھی نہیں کریں گے۔کوئی کہے گا لکھو تو کہہ دیں گے قلم ٹوٹ گیا ہے۔ ہماری انگلیوں میں لکھنے کی قوت ہی نہیں رہی ہے۔ قدرت نے ہم کو لکھنے کی جس صلاحیت سے نوازا تھا وہ واپس لے لی ہے۔ ہاں سنا تم نے۔ کچھ نہیں لکھیں گے۔ کبھی بھی نہیں۔ وہ نہ سمجھنے والے انداز میں حیران نظروں سے ہم کو دیکھتا رہا۔ اور پھر لیپ ٹاپ میز پر رکھ زیرِ لب یہ کہتا ہوا واپس مڑ گیا۔ "ٹیسٹ کر لیجیے گا۔"